***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > زکوٰۃ کا بیان

Share |
سرخی : f 1240    زکوۃ میں زوجین کا مال الگ الگ حساب کیا جائے گا!
مقام : سکندرآباد,
نام : محمد جرار حسین عقیل
سوال:    

کیا زکوٰۃ کے لئے عورت اور مرد کی جائیدادوں کا الگ الگ حساب کرنا چاہئے؟ عورت اکثر زیورات کی مالک ہوتی ہے تو کیا ان زیورات کو شوہر سے منسلک دوسری جائیدادوں مثلاً روپیہ پیسہ‘ بینک میں جمع پیسہ کے ساتھ ملاکر زکوٰۃ کا حساب کرنا چاہئے یا بیوی اور شوہر کی جائیدادوں کو علیحدہ علیحدہ؟


............................................................................
جواب:    

زوجین کے زیورات ورقوم کا الگ الگ حساب کیا جائے اگر دونوں میں سے کوئی ایک قرض دار ہو تو قرض کی رقم اس کے مال سے منہا کی جائے اور بقیہ رقم نصاب تک پہنچنے پر اس کی زکوٰۃ ادا کی جائے اور اگر نصاب کو نہ پہنچے توزکوۃ نہیں ہے۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com