***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 195    کیا قئے سے روزہ ٹوٹتاہے ؟
مقام : ہانک کانگ,
نام : محمد عدنان ‘
سوال:    

روزہ کی حالت میں میری طبیعت اچانک ناساز ہو چکی تھی جس کی بناء مجھے قئے ہوگئی ۔کیا قئے سے روزہ ٹوٹ جاتاہے اور روزہ کی قضاء کرنا ضروری ہے ؟


............................................................................
جواب:    

اگر قئے بے اختیار ہوجائے تو اس سے نہ روزہ ٹوٹے گا اور نہ قضاء لازم آئے گی اگرچہ قئے منہ بھر ہو ۔ لیکن اگر کوئی شخص قصداً قئے کرے اور قئے منہ بھر ہو تو روزہ ٹوٹ جائے گا اور اس روزہ کی قضاء لازم آئیگی ۔ فتاوی عالمگیری ج 1 ص 203 ما یوجب القضاء دون الکفارۃ کے بیان میں ہے ’’ اذا قاء او استقاء ملأ الفم او دونہ عاد بنفسہ او اعاد او خرج فلا فطر علی الاصح الا فی الاعادۃ والاستقاء بشرط ملأ الفم ھکذا فی النھر الفائق ‘‘۔
واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com