***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 422    مسجد کو پاک وصاف رکھنے کا حکم
مقام : اندور،مدھیہ پردیش,
نام : محمدمجاہد
سوال:    

میں جانناچاہتاہوں کہ کیاہم مسجدمیں اپنے جوتے یاچپل لاسکتے ہیں؟جب ہم نمازکے لئے آئیں کبھی ہمارے جوتے اورموزے گیلے اورگندے ہوتے ہیں توکیامسجدمیں جوتے چپل لاناٹھیک ہے ؟


............................................................................
جواب:    

مسجدعبادت وذکرالہٰی کا مقام ہے ،مسلمان کواس کے تقدس کا لحاظ رکھناچاہئے ،اس کی صفائی وستھرائی کا خاص اہتمام کرنا چاہئے ؛جیساکہ السنن الکبری للبیہقی ،باب فی تنظیف المساجد اور مسند امام احمد میں حدیث پاک ہے :

عن عائشة رضى الله عنها : أن رسول الله صلى الله عليه وسلم أمر ببنيان المساجد فى الدور ، وأمر بها أن تطيب وتنظف .

 ترجمہ :ام المؤ منین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ حضرت رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے محلوں میں مسجدیں بنانےکا حکم فرمایا اور اس میں خوشبو جلانے ا ور اسے صاف ستھرا رکھنے کا حکم فرمایاہے ۔

﴿ السنن الکبری للبیہقی ،باب فی تنظیف المساجد ، حدیث نمبر:4480 ۔ مسند احمد بن حنبل ،حدیث نمبر:27141 ﴾

مسجدمیں جوتے چپل رکھنے کے لئے جومخصوص خانے ،باکس ﴿Box﴾ وغیرہ ہوتے ہیں ،جوتے چپل ،موزے اس میں رکھیں یابصورت دیگراحتیاط کے ساتھ مسجدکے کسی گوشہ میں بھی رکھ سکتے ہیں ۔

اگرجوتوں یاموزوں سے پانی نہ ٹپک رہاہو تو انہیں مسجد میں لے جانے کی گنجائش ہے ،اور اگر جوتے یاموزے اس قدرگیلے ہوں کہ ناپاک پانی کے قطرات ٹپکتے ہوں تواس حالت میں مسجدکے اندرلے جانادرست نہیں اوراگرپاک پا نی کے قطرے ٹپک رہے ہوں تب بھی ان کوخشک کئے بغیرلے جاناآداب مسجدکے خلاف ہے۔

 واللہ اعلم بالصواب ۔

 مفتی سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com