***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > اخلاق کا بیان > آداب

Share |
سرخی : f 591    گھڑی کس ہاتھ پر باندھی جائے
مقام : چادر گھاٹ‘ حیدرآباد,
نام : محمد انوار الحق
سوال:    

میں نے دیکھا کہ بعض لوگ گھڑی دائیں ہاتھ پر باندھتے ہیں اور بعض لوگ بائیں ہاتھ پر‘ اسلامی طریقہ سے گھڑی کونسے ہاتھ پر باندھنا چاہئے؟


............................................................................
جواب:    

گھڑی دائیں یا بائیں کسی بھی ہاتھ پر باندھنا جائز ہے‘ حضور اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے خیر کی چیزوں میں دائیں جانب کو اختیار فرمایا ہے‘ گھڑی بھی چونکہ خیر کا ذریعہ ہے‘ اس سے نماز، سحر و افطار کے اوقات اور دیگر دینی، معاشی ومعاشرتی امور کے لئے اوقات معلوم کئے جاتے ہیں‘ لہٰذا گھڑی دائیں ہاتھ پر باندھنا بہتر ہے۔اگراسکو انگوٹھی پر قیاس کریں تو انگوٹھی داہنے ہاتھ یا بائیں ہاتھ ‘ ہردو میں پہننا احادیث شریفہ سے ثابت ہے لہذا دونوں ہاتھوں میں بھی باندھنا شرعاً جائز ہے ۔ واللہ اعلم بالصواب– سیدضیاءالدین عفی عنہ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر۔ WWW.ZIAISLAMIC.COM حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com