***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 65    کیا برتھ ڈے منایا جاسکتا ہے
مقام : aaghra,
نام : سید منظور
سوال:    

میں آپ سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ اسلا م میں برتھ ڈے کی کیا حیثت ہے ؟کیا برتھ ڈے منایا جاسکتا ہے ؟اور کیا جسکا برتھ ڈے ہے اس کو ویش کی جاسکتی ہے یا نہیں ،میں سنا ہے کہ برتھ ڈے منایا جاسکتا ہے لیکن شریعت کے اند ررہ کر۔ مہربانی فرماکر مجھے بتائیں کہ صحیح طریقہ کیا ہے


............................................................................
جواب:    

:انسان کو چاہئے کہ وہ اپنی حیات مستعار کو غنیمت جانے،ہروقت اسے آخرت کی فکر دامن گیررہے ،کیونکہ جوں جوں وقت گزرتا جاتا ہے توعمر کا ایک ایک لمحہ کم ہوتا جاتا ہے،حضرت نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے اطاعت وفرمانبرداری کیلئےزندگی کوغنیمت سمجھنے کی تاکید فرمائی : مشکوۃ المصابیح ص 3 44، میں حدیث شریف ہے۔ :عن عمر بن میمون الاودی قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اغتنم خمساقبل خمس۔ شبابک قبل ھرمک ۔ وصحتک قبل سقمک۔ وغناک قبل فقرک۔ وفراغک قبل شغلک ۔ وحیوتک قبل موتک ۔ ترجمہ: : حضرت عمرو بن میمون اودی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص سے نصیحت کرتے ہوئے فرمایا: تم پانچ چیزوں کو پانچ چیزوں سے پہلے غنیمت جانو۔ اپنی جوانی کو بڑھاپے سے پہلے، تندرستی کو بیماری سے پہلے ،تونگری کو محتاجی سے پہلے ،فرصت کو مصروفیت سے پہلے اور زندگی کو موت سے پہلے۔

      یوم پیدائش کے موقع پر بہی ایک بندہ مومن کو اپنی پچہلی زندگی کامحاسبہ کرنا چاہئے اللہ کی بارگاہ میں رجوع ہوکر توبہ و استغفار کرنی چاہئے ونیزانعام خداوندی پر سجدہ شکر بجالانا چاہئے تاہم برتھ ڈے کی مناسبت سے شکران نعمت کے طورپر حدودشریعت میں رہتے ہوئے کوئی ایسا اہتمام کیاجائے جن میں غیر اقوام سے مشابہت نہ ہو تو اس میں شرعًا مضائقہ نہیں،اوراس موقع پرمبارکبادیوں کا تبادلہ بھی جائزہے۔
واللہ اعلم بالصواب –

سیدضیاءالدین عفی عنہ
شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔
حیدرآباد دکن۔
All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com