***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > حج وعمره کا بیان

Share |
سرخی : f 745    حج فرض ہونے کے بعد تاخیر کرنے کاحکم
مقام : گولکنڈہ ،حیدرآباد,
نام : محمد عبد النعیم
سوال:     میرے ملاقاتیوں میں ایک صاحب ہیں ، الحمدللہ ان کے پاس کافی کچھ دولت ہے اور حج بھی فرض ہوگیا لیکن وہ ہرسال ٹالتے جاتے ہیں ، کہتے ہیں میں بعد میں حج کرلوں گا، حج فرض ہونے کے بعد تاخیر کرنے کا کیا حکم ہے ؟ بیان فرمائیں ۔
............................................................................
جواب:     حج ہر صاحب استطاعت پر زندگی میں ایک مرتبہ فرض ہے ، حج فرض ہونے کے بعد حج میں تاخیر نہ کی جائے ، اس فریضۂ اسلامی کی ادائی میں عجلت کریں ، جیساکہ سنن ابوداؤد میں حدیث پاک ہے : عن ابن عباس، قال : قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم : من اراد الحج فلیعجل ۔ ترجمہ : سیدنا عبد اللہ ابن عباس رضی اللہ عنہماسے روایت ہے ، آپ نے فرمایاکہ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جو شخص حج کا ارادہ رکھتاہو وہ اُس کو ادا کرنے میں عجلت کرے ۔ (سنن ابوداؤد ، کتاب المناسک ،حدیث نمبر:1734)۔ حج فرض ہونے کے بعد بلا عذر شرعی تاخیرکرنا درست نہیں ۔
واللہ اعلم بالصواب ۔
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
نائب شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ،
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com
حیدرآباد دکن۔
08-10-2010

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com