AR 476 : قرآن کریم کی تلاوت کے آداب

قرآن کریم  کی تلاوت کے آداب

قرآن کریم کی تلاوت کا پہلا ادب یہ ہے کہ تلاوت کرنے والا با وضو، وقار اور ادب کے ساتھ قبلہ رو، گردن جھکا کر بیٹھے، تکیہ نہ لگائے، نشست میں نخوت اور غرور کا شائبہ نہ ہو۔

 تنہا اس طرح بیٹھے جس طرح استاذ کے سامنے شاگرد بیٹھتا ہے۔ قرآن مجید کو رحل یا تکیہ پر رکھنا چاہئے۔

آیات قرآن کو ٹھہر ٹھہر کر صحیح زیر و زبر کے ساتھ اس طرح پڑھے کہ حروف اپنے صحیح مخارج سے ادا ہوں اور ہر لفظ صاف سنائی دے۔

قرآن شریف کی تلاوت میں رونا مستحب ہے اور باعث ثواب ہے۔

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے کہ قرآن کو پڑھو اور گریہ کرو، اگر گریہ نہ کرسکو تو رونے کی شکل بناؤ۔

 خاص کر آیاتِ عذاب، تہدید، وعید، عہد و میثاق اوامر و نواہی کے پڑھتے وقت اپنی کوتاہیوں اور تقصیروں کو یاد کرکے ضرور رونا چاہئے۔ اور دل کو غمگین بنانا چاہئے؛ کہ یہ رحمتِ الٰہی کو اپنی طرف متوجہ کرنے کا ذریعہ ہے۔

جب سجدہ کی آیتوں میں سےکوئی آیت تلاوت میں آجائے تو کمال عجز و فروتنی کے ساتھ سجدہ کرے، جب کلام مجید کی تلاوت شروع کرے تو"اَعُوْذُ بِاللهِ مِنَ الشَّیْطنِ الرَّجِیْمْ" اور"بِسْمِ اللهِ الرَّحْمنِ الرَّحِیْمْ" کہے اور جب تلاوت ختم کرے تو"صَدَقَ اللهُ الْعَلِیُّ الْعَظِیْمْ" کہے۔

" تلاوت قرآن "خلوص نیت کے ساتھ ہونی چاہئے،خواہ پکار کر پڑھے خواہ آہستہ پڑھے، اچھی نیت کے ساتھ جو ،ریا اور نمائش سے پاک ہو،  یہ باعثِ خیر و برکت ہے۔

کلام مجید کی تلاوت کے لئے تجوید سیکھ کر ترتیل اور تجوید کا پورا اہتمام رکھنا چاہئے، اسے عام کتابوں اور عبارتوں کی طرح نہ پڑھے بلکہ خاص طور پر پوری خوش آوازی کے ساتھ پڑھے لیکن گانے کا انداز نہ ہو۔

 قرآن پاک کو خوش آوازی اور پورے اہتمام کے ساتھ پڑھنا اوربھی باعث ثواب ہے۔

تلاوت قرآن مجید کے وقت رُموز و علامات اور حرکات و سکنات پر احتیاط سے عمل کرنا چاہئے۔

 قرآن مجید میں چند ایسے مقامات ہیں کہ ذرا سی بے احتیاطی سے نا دانستہ کلمۂ کفر کا ارتکاب ہو جاتا ہے، زیر اور زبر و پیش میں ردوبدل کردینے سے معنی کچھ کے کچھ ہو جاتے ہیں اور دانستہ پڑھنے سے گناہ کبیرہ بلکہ کفر تک نوبت پہونچ جاتی ہے ،اس لئے تلاوت میں احتیاط ضروری ہے۔

ملخص از:نورالمصابیح،حصہ ششم(6)،ص4/5

www.ziaislamic.com

 




submit

  AR: 502   
راہ خدا میں خرچ کرنے کی فضيلت
..........................................
  AR: 501   
لیلۃ الجائزۃ (انعام والی رات)
..........................................
  AR: 500   
اعتکاف احکام ومسائل
..........................................
  AR: 499   
تذکرہ ام المؤمنین سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنہا
..........................................
  AR: 498   
ماہ رمضان المبارک کی فضیلت وعظمت پرمشتمل پچیس 25 احادیث شریفہ
..........................................
  AR: 497   
روزہ فوائد وثمرات
..........................................
  AR: 496   
روزہ فوائد وثمرات
..........................................
  AR: 495   
عشرۂ ذی الحجہ فضائل واحکام
..........................................
  AR: 494   
رئیس العلماء حضرت علامہ مولانا سید شاہ طاہر رضوی قادری نجفی رحمۃ اللہ تعالی علیہ صدرالشیوخ جامعہ نظامیہ
..........................................
  AR: 493   
غزوۂبدر،ایک مطالعہ
..........................................
  AR: 492   
رمضان کے تین عشرے اور ان کی خصوصیات
..........................................
  AR: 491   
حسن اخلاق کی تعلیم اور اسلام
..........................................
  AR: 490   
حسد کی تباہ کاریاں اور اس کے نقصانات
..........................................
  AR: 489   
أَلَمْ يَجِدْكَ يَتِيمًا فَآَوَى کی نفیس تفسیر
..........................................
  AR: 488   
حدیث زيارت 'علماء ومحدثین کی نظر میں
..........................................
  AR: 487   
حضور اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کا حج
..........................................
  AR: 486   
حج کے اقسام:
..........................................
  AR: 485   
حج ایک عظیم فریضہ،استطاعت کے باوجود ترک کرنے پر سخت وعید
..........................................
  AR: 484   
حج ایک اسلامی فریضہ
..........................................
  AR: 483   
کامیاب کون؟
..........................................
Copyright 2008 - Ziaislamic.com All Rights reserved