***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 1100    ماہ صفر میں کونسی  دعا پڑھی جائے ؟
مقام : سعودیہ عربیہ,
نام : کریم الدین
سوال:    

میں پریشانیوں میں گھرا ہوا ہوں ، میرے ساتھ صفر کے مہینہ میں عام طورپرایساہوتاہے کہ مشکلات وپریشانیوں کے وقت ذہن میں مختلف خیالات پیدا ہوتے ہیں ،ایسے وقت مجھے کیا کرنا چاہئے ؟ ماہ صفر میں کیا دعاپڑھی جائے ؟


............................................................................
جواب:    

جب بھی کوئی مصیبت سے دوچار ہوتو اسے اپنے عمل کا جائزہ لیناچاہئے ،اپنے اعمال میں جہاں کوتاہی واقع ہوئی ہے اسکی اصلاح کرنی چاہئے ، توبہ کرکے رجوع الی اللہ ہوناچاہئے کیونکہ مصیبت وبلاء کے واقع ہونے میں کسی مہینہ یاوقت کا کوئی عمل دخل نہیں ہے بلکہ اپنے اعمال ہی اس کا سبب ہوتے ہیں ارشاد باری تعالی ہے : ومااصابکم من مصیبۃ فبما کسبت ایدیکم ویعفواعن کثیر۔ ترجمہ: اور جومصیبت بھی تمکو پہنچتی ہے (اس بدعملی )کے سبب سے پہنچتی ہے جوتمہارے ہاتھوں نے کمائی ہے حالانکہ وہ(اللہ) بہت سی کوتاہیوں کو درگزر بھی فرماتا ہے (سورۃ الشوری ،آیت ۔30﴾ نیک وصالح بندہ کو بھی زندگی میں مختلف قسم کے مصائب وآلام سے گزرنا پڑتا ہے اور یہ اللہ تعالی کی طرف سے اس کے لئے امتحان ہوتا ہے ،جولوگ مصائب وآلام کا صبر و استقامت کے ذریعہ مقابلہ کرتے ہیں وہ کامیاب ہیں اللہ کی نصرت وحمایت انکے ساتھ ہے ۔ زجاجۃ المصابیح ج3ص445 میں سنن ابوداؤد شریف کے حوالہ سے حدیث پاک منقول ہے : عن عروۃ بن عامر قال ذکرت الطیرۃ عندرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فقال « أحسنها الفأل ولا ترد مسلما فإذا رأى أحدكم ما يكره فليقل اللهم لا يأتى بالحسنات إلا أنت ولا يدفع السيئات إلا أنت ولا حول ولا قوة إلا باللہ » رواہ ابوداؤد مرسلا ۔ ترجمہ: سیدنا عروۃ بن عامر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا: حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت اقدس میں بدشگونی کا ذکر کیا گیا توآپ نے ارشاد فرمایا: اچھا شگون ، فالِ نیک ہے اور بد شگونی کسی مسلمان کے کام میں رکاوٹ نہیں بنتی، پس جب تم میں سے کوئی ایسی چیز دیکھے جس کو وہ ناپسند کرتا ہے تو چاہئے کہ وہ یہ دعاء پڑھے : اللَّهُمَّ لاَ يَأْتِى بِالْحَسَنَاتِ إِلاَّ أَنْتَ وَلاَ يَدْفَعُ السَّيِّئَاتِ إِلاَّ أَنْتَ وَلاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّةَ إِلاَّبِاللّه۔ ترجمہ: اے اللہ ہرقسم کی بھلائیوں کولانے والاتوہی ہے اور تمام قسم کی برائیوں کودفع کرنے والابھی توہی ہے ، نہ برائی سے بچنے کی کوئی طاقت ہے اورنہ نیکی کرنے کی کوئی قوت ہے مگر اللہ ہی کی مددسے ۔﴿سنن ابو داؤد شریف ،باب فی الطیرة ،حدیث نمبر:3921﴾ لہذاآپ اس دعا کوپڑھتے رہیں ۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com