***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 1264    قرآن کریم میں صلۂ رحمی کاحکم
مقام : ,
نام :
سوال:    

مفتی صاحب رشتہ داروں کے ساتھ تعلقات کی اہمیت پر قرآن شریف میں کیا رہنمائی ملتی ہے بیان فرمائیں


............................................................................
جواب:    

قرآن شریف کی متعدد آیات میں صلہ رحمی کرنے کا حکم ہے اور رشتہ داری ختم کرنے والوں کو زمین میں فساد برپاکرنے والے قراردیا گیا اور بروز محشرنقصان اٹھانے والے کہاگیا ، حق تعالیٰ کا ارشاد ہے الذین ینقضون عھداللہ من بعدمیثاقہ ویقطعون ما امراللہ بہ ان یوصل ویفسدون فی الارض اولئک ھم الخاسرون ترجمہ : "(یہ نافرمان وہ لوگ ہیں) جو اللہ کے عہد کو اس سے پختہ کرنے کے بعد توڑتے ہیں، اور اس تعلق کو کاٹتے ہیں جس کو اللہ نے جوڑنے کا حکم دیا ہے اور زمین میں فساد بپا کرتے ہیں ، یہی لوگ نقصان اٹھانے والے ہیں" (سورۃ البقرۃ:27) اور والدین واقارب سے حسن سلوک کی تاکید فرمایا ، ارشاد ہے واذاخذنا میثاق بنی اسرائیل لا تعبدون الااللہ وبالوالدین احسانا وذی القربیٰ وَالْيَتَامَى وَالْمَسَاكِينِ وَقُولُواْ لِلنَّاسِ حُسْناً وَّأَقِيمُواْ الصَّلاَةَ وَآتُواْ الزَّكَاةَ ثُمَّ تَوَلَّيْتُمْ إِلاَّ قَلِيْلاً مِّنكُمْ وَأَنْتُمْ مُّعْرِضُونَ ترجمہ :"اور (یاد کرو) جب ہم نے اولادِ یعقوب سے پختہ وعدہ لیا کہ اللہ کے سوا (کسی اور کی) عبادت نہ کرنا اور ماں باپ کے ساتھ اچھا سلوک کرنا اور قرابت داروں اور یتیموں اور محتاجوں کے ساتھ بھی (بھلائی کرنا) اور عام لوگوں سے (بھی نرمی اور خوش خُلقی کے ساتھ) نیکی کی بات کہنا اور نماز قائم رکھنا اور زکوٰۃ دیتے رہنا، پھر تم میں سے چند لوگوں کے سوا سارے (اس عہد سے) رُوگرداں ہو گئے اور تم (حق سے) گریز ہی کرنے والے ہو" (سورۃ البقرۃ : 83) واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com