***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 1575    تصویر والی ٹی شرٹ کے اوپر دوسرا لباس اور نماز کا حکم
مقام : آسٹریلیا,
نام : محمد نعمان
سوال:    

مفتی صاحب ! میں نماز کے بارے میں پوچھنا چاہتا ہوں ، میرے پاس فوٹوز والی بہت سی ٹی شرٹ ہیں ، مجھے معلوم ہوا ہے کہ فوٹو والے کپڑے پہن کر نماز نہیں پڑھنا چاہئے ، سوال یہ ہے کہ اگر میں فوٹو والی ٹی شرٹ کے اوپر کوئی شرٹ یا کُرتا پہن کر نماز پڑھوں تو کیا میری نماز ہوجائے گی؟ کیونکہ میرے پاس ایسی ٹی شرٹ بہت ساری ہیں ۔برائے مہربانی جواب عنایت فرمائیں۔


............................................................................
جواب:    

تصویر والے لباس کے ساتھ نماز مکروہ تحریمی ہے ، اس سلسلہ میں فقہاء کرام نے صراحت کی ہے کہ اگر کوئی شخص تصویر والا لباس پہنے اور اس کے اوپر کوئی اور لباس بھی اس طرح پہن لے کہ اوپر والا لباس نیچے کے تصویر والے لباس کو چھپادے تو نماز بلا کراہت ہوجائے گی ، تاہم تصویر والے لباس سے ہرحال میں احتیاط کیا جائے۔

            لہذا اگر آپ تصویر والی ٹی شرٹ کے اوپر کوئی شرٹ یا قمیص وغیرہ پہن لیں جس کی وجہ سے تصویر ڈھک جائے تو ایسی صورت میں کراہت باقی نہیں رہے گی۔

            درمختار، مکروہات نماز کے بیان میں ہے : (ولبس ثوب فیہ تماثیل ) ذی روح ۔ (درمختار، کتاب الصلوٰۃ ، باب مایفسد الصلوٰۃ وما یکرہ فیھا) اور ردوالمحتار میں اسی جگہ ہے : ( قولہ أو ثوب آخر ) بأن کان فوق الثوب الذی فیہ صورۃ ثوب ساتر لہ فلا تکرہ الصلاۃ فیہ لاستتارہا بالثوب بحر۔ (ردالمحتار ، کتاب الصلوٰۃ ، باب مایفسد الصلوٰۃ وما یکرہ فیھا)

واللہ اعلم بالصواب –

سیدضیاءالدین عفی عنہ

شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ

بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔

www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن 

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com