***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 537    کیا جمعہ کے دن انتقال ہونا باعث فضیلت ہے؟
مقام : پاکستان,
نام : سید محمد عزیر جاوید عطاری قادری رضوی
سوال:    

السلام علیکم حضور! برائے مہربانی یہ بتائیں کہ کیا یہ حدیث صحیح ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’جو کوئی جمعہ کے روز یا اس سے ایک دن قبل انتقال کرجائے ‘ وہ قبر کے عذاب سے محفوظ ہوجاتا ہے‘‘ ممکن ہو تو اس کا مکمل حوالہ بھی دیجئے۔ جزاک اللہ خیراً کثیراً ۔


............................................................................
جواب:    

وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ وبرکاتہٗ! مسند احمد میں سیدنا عبداللہ بن عمرو بن عاص سے روایت ہے حضور پاک علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ارشاد فرمایا: من مات یوم الجمعۃاو لیلۃ الجمعۃ وقی فتنۃ القبر۔ ترجمہ: جس شخص کا انتقال جمعہ کے دن یا جمعہ کی رات ہو‘ وہ قبر کے فتنہ سے بچالیا گیا۔ (مسند امام احمد‘ حدیث نمبر: 6753)۔ کنز العمال کے یہ الفاظ ہیں: من مات یوم الجمعۃ او لیلۃ الجمعۃ اجیر من عذاب القبر و جاء یوم القیامۃ و علیہ طابع الشھداء۔ (حل عن جابر) ترجمہ: جس شخص نے جمعہ کے دن یا جمعہ کی رات انتقال کیا‘ اُس کو عذابِ قبر سے بچالیا جائے گا اور وہ قیامت کے دن اس حال میں آئے گا کہ اس پر شہداء کی مہر ہوگی۔ (حلیۃ لابی نعیم‘ بہ روایت جابر رضی اللہ عنہ) (کنز العمال‘ کتاب الصلوٰۃ‘ الباب السادس فی صلوٰۃ الجمعۃ‘ الفصل الاولیٰ فی فضائلھا‘ حدیث نمبر: 21085) آپ نے مسند احمد کا حوالہ ذکر کیا ہے‘ مسند احمد میں ’’جمعہ سے ایک دن پہلے‘‘ یا جمعرات کے الفاظ مذکور نہیں‘ جمعہ کی رات کا ذکر ہے۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com