***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 578    شوہر کا نام لے کر مخاطب کرنا
مقام : گلبرگہ،انڈیا,
نام : عفراء سلطانہ
سوال:    

آج کل عورتیں اپنے شوہر کو نام سے پکار رہی ہیں اور اس کو فخر سمجھ رہی ہیں ،کیا عورتوں کے لئے شوہر کواس طرح نام کے ساتھ آواز دینا درست ہے؟ شرعی حکم بیان فرمائیں۔


............................................................................
جواب:    

اسلام اخلاق وآداب ، تہذیب وتمدن کی تعلیم دیتا ہے ، اس نے چھوٹوں کو بڑوں کے ساتھ پیش آنے کے آداب سکھائے ہیں ، اور ہر ایک کو اس کے حسب مرتبہ خطاب وندا کرنے کے اصو ل دئے ہیں چنانچہ بیوی کے لئے اپنے شوہر کا نام لے کر پکارنا شرعاً مکروہ قرار دیا گیا ہے بلکہ بیوی کو چاہئے کہ اپنے شوہر کے مقام ومرتبہ کا لحاظ کرتے ہوئے اسے میرے سرتاج ، میرے آقا اور اس جیسے عظمت والے الفاظ سے مخاطب کرے ۔ در مختار ج5‘ کتاب الحظر والاباحۃ‘ ص297میں ہے : (ویکرہ ان یدعو الرجل اباہ وان تدعوالمرأۃ زوجھا باسمہ ) اھ بلفظہ۔ رد المحتار کے اسی صفحہ پر ہے: (قولہ ویکرہ ان یدعوالخ) بل لا بد من لفظ یفید التعظیمک’’یاسیدی‘‘ ونحوہ لمزید حقہما علی الولد والزوجۃ۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ WWW.ZIAISLAMIC.COM حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com