***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 902    اگر سورہ فاتحہ کے بعد آمین بھول جائے !
مقام : بھٹکل ، انڈیا,
نام : محمداقبال
سوال:    

نماز میں امام صاحب سے سورۂ فاتحہ سن کر مقتدی آمین کہتے ہیں۔ اگر کوئی شخص آمین کہنا بھول جائے تو کیا کرے ؟کیا ضم سورہ پڑھنے کے بعد رکوع میں جانے سے پہلے بھی آمین کہہ سکتے ہیں۔ ضم سورہ کے بعد بھی نہیں کہا تو کیا سجدہ سہو واجب ہوگا ؟


............................................................................
جواب:    

نماز میں سورۂ فاتحہ کے بعد آمین کہنا سنت ہے ۔ اس لئے کوئی شخص آمین کہنا بھول جائے اور امام صاحب کسی دوسری سورت کی تلاوت شروع کردیں تو اب آمین نہ کہے اس لئے کہ آمین کہنے کا وقت فوت ہوچکا, اس کی تلافی اور پابجائی نہیں ہوتی اور نہ نماز میں سنت چھوڑنے کی وجہ سے سجدہ سہو واجب ہوتا ہے ۔ لہذا اس شخص کی نماز درست ہوگئی لیکن تاہم آئندہ سنتوں کا اہتمام کیا جائے۔ ردالمحتار ج 1نماز کی سنتوں کے بیان کے تحت ص 351 میں ہے : (والتامین ) ای عقب قرأۃ الفاتحۃ۔ ترجمہ : سورہ فاتحہ کی تلاوت کے بعد آمین کہنا سنت ہے ۔ نیز اسی کے صفحہ 350میں ہے : (سننھا) ترک السنۃ لا یوجب فسادا ولاسھوابل اساء ۃ ۔ ترجمہ : سنت کو چھوڑنے سے نماز فاسد نہیں ہوتی اور نہ سجدۂ سہو واجب ہوتا ہے بلکہ ایسا کرنا مناسب نہیں ۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاء الدین نقشبندی عفی عنہ شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی ابوالحسنات اسلامک ریسرچ سنٹرwww.ziaislamic.com حیدرآباد،دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com