***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > تلاش کریں

Share |
سرخی : f 933    تعمیر کے دوران چپل پہن کر مسجد میں آنا؟
مقام : بنگلور ،انڈیا,
نام : علی اللہ قریشی
سوال:    

ایک قدیم مسجد کی تعمیر ہورہی ہے۔ جسکی عمارت بوسیدہ ہوچکی تھی۔ اسکو شہید کرکے جدید تعمیر کی جارہی ہے۔ اس دوران مسجد کے ایک حصہ میں با جماعت نماز ادا کی جارہی ہے۔ مسجد کے جس مقام پر تعمیری سامان ہے وہاں بعض لوگ جوتے چپل پہن کر مقام جماعت تک آرہے ہیں کیا قدیم عمارت شہید کرنے کے بعد نئی عمارت تعمیر ہونے تک جوتے چپل پہن کر مسجد میں آنا درست ہے؟


............................................................................
جواب:    

مسجد عبادت و ذکرالٰہی کا مقام ہے۔ اسے نجاست و گندگی سے پاک و صاف رکھنا ضروری ہے۔ جیسا کہ فتاویٰ عالمگیری ج 5 ص 321 میں ہے: ان ینزھہ عن النجاسات۔ ترجمہ: مسجد کو نجاستوں سے پاک رکھنا چاہئے۔ مسجد جب ایک مرتبہ نماز پڑھنے کے لئے خاص کردی گئی ہو اسکا ادب و احترام ہر حال میں ضروری ہے۔خواہ مسجد کی قدیم عمارت شہید کردی گئی ہو یا باقی ہو، یا مکمل ہوچکی ہو۔ دوران تعمیر مسجد کا حصہ ہی رہتا ہے اس کے تقدس واحترام میں قدرے فرق نہیں آتا اس لئے ہر صورت میں چپل یا جوتا پہن کر مسجد میں آنا مکروہ ہے ۔ چنانچہ فتاوی عالمگیری ،کتاب الکراھیۃ، الباب الخامس فی آداب المسجد والقبلۃمیں ہے:ودخول المسجد متنعلا مکروہ ،کذافی السراجیۃ۔ لہذا مسجد کے جس مقام پر تعمیری سامان موجود ہے وہاں جوتے چپل پہن کر آنا شرعا درست نہیں۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com