علاج السالکین  
حضرت ابوالحسنات سید عبداللہ شاہ نقشبندی مجددی قادری محدث دکن رحمۃ اللہ علیہ : مصنف
  سرورق     << تمام کتابیں دیکھیں  
 
Share |
ڈاؤن لوڈ
Download Book in pdf
 
کتاب کاؤنٹر
This Book Viewed:
700 times
 
تلاش کریں
 

 

 
 
شکایت

شکایت

       اے خدا کے ڈھونڈھنے والو !تم نے خدا کو ہر جگہ ڈھونڈا، کہاں کہاں گشت لگایا ،دشوار سے شوار مقامات تک بھی ہو آیا پر کہیں اس کا پتہ نہ پایا۔

       آؤ ہم تمہیں جہاں بتاتے ہیں وہاں ڈھونڈو !وہ ملے گا ،تو وہیں ملے گا سنو سنو! اس کے ملنے کی جگہ دل ہے ،دل ہی تو وہ تخت ہے جس کو عرش سبحان کہتے ہیں۔ نہیں نہیں دل ہی وہ مکان ہے جسے لامکان کہتے ہیں۔ دل اس کے گھر کا نام ہے جو بے نشان ہے ،اسی نے دل کو یہ وسعت دی ہے کہ سب کی سمائی اس میں ہوجاتی ہے، اُسی نے اس کو یہ فراخی دی ہے کہ سب کی گنجائش اس میں ہوجاتی ہے کہ کوئی چیز نہیں کہ اس میں نہ سما سکے ،کوئی شئے نہیں کہ اس میں نہ آسکے۔

       چیزوں کا ذکر چھوڑو ،اشیاء کا نام نہ لو،وہ اس میں سما جاتا ہے جو کہیں نہیں سماتا ،وہ اس میں رہتا ہے جو کہیں نہیں رہتا ،وہ اس میں نظر آتا ہے جو کہیں دکھائی نہیں دیتا ،وہ اس میں ٹہرتا ہے جو کہیں نہیں ٹہرتا، جو زمین پر نہیں سماتا، جو آسمان میں نہیں آتا وہ دل ہی میں آجاتا ہے۔

مولانا فرماتے ہیں

گفت پیغمبر کہ حق فرمودہ است   من نہ گنجم، میچ در بالا و پست

در زمیں و آسمان و عرش نیز             می نہ گنجم ایں یقین داں اے عزیز

در دل مومن بگنجم اے عجیب    گرمرا  جوئی درآں دلہا طلب

       یعنی نہ زمین میں یہ گنجایش نہ آسمان میں یہ وسعت جو مومن کے دل میں ہے، اگر مجھ کو ڈھونڈنا ہو تو انہیں دلوں میں ڈھونڈو۔

       اے خدا کے ڈھونڈنے والو! یہ جو کچھ تم نے سنا سب سچ ہے مگر یہ اس دل کی شان نہیں ہے جو ہمارے پہلو میں ہے۔ اس نے تو لٹیاہی ڈبودی ،رات دن غفلت میں ڈوبا ہوا ہے ،اس کی عمر قیل و قال میں گذر رہی ہے ،ہر وقت نئی نئی بیڑیوں میں جکڑا جاتا ہے ،پھر بھی جب سوجھتی ہے تو اور جکڑے جانے ہی کی سوجھتی ہے۔ راستہ بھولا ہوا غفلت کی نیند میں ہے، غیر خدا کی محبت میں کچھ ایسا مست ہے کہ یہ نشہ ابھی اترا ہی نہیں کہ اور پیتے ہی جاتا ہے پھر آخرت کا ہوش آئے تو کس طرح آئے؟

کم اُنا دی وهو لا يصغي التناد          وافوادی وافؤادی وا فؤاد

       ہائے اے دل۔ افسوس اے دل۔ میرے پیارے دل! میں تجھے کب تک پکاروں تو میری سنتا ہی نہیں ،وہ دن کب آئیں گے جو تو پلٹی کھائے گا ،سب کو چھوڑ کرایک کا ہوجائے گا۔

يا بهائی اتخذ قلباً سواہ          فهو ما معبوده الاهَواه

       کیا کروں یہ دل تو اب کام کا نہ رہا۔ اس نے تو خدا کو چھوڑ کر خواہشات ِنفسانی کو اپنا معبود بنا رکھا ہے اس دل کو تو آگ لگادو۔

       خدا کو ڈھونڈنے کے پہلے کوئی اور ایسا دل ڈھونڈو جس میں خدا آسکے اس کا معبود ہو تو خدا ہی ہو، اس کا محبوب ہو تو خدا ہی ہو، اس کا مقصود ہو تو خدا ہی ہو۔   ؂

اے عندلیب آؤ کریں مل کے زاریاں            تو ہائے گل پکارمیں چلاؤں ہائے دل

       طرح طرح کی بیماریوں نے اس دل کو تو مسخ کردیا ہے اس کو یہ بھی خبر نہیں کہ میں بیمار ہوں۔

       سُن اے دل تو بیمار ہے ،تیری بیماریوں کا پہچاننا بہت مشکل ہے، اس لئے تو سمجھتا ہی نہیں کہ میں بیمار ہوں ،ایک وقت تیرے سمجھنے کا آتا ہے اس وقت سمجھنے سے کیا فائدہ ؟اب وقت ہے سمجھتا ہے تو سمجھ لے۔   ؂  

مانو نہ مانو حضرت دل اختیار ہے   ہم نیک و بد حضور کو سمجھائے جاتے ہیں

      

ہر چیز علامتوں سے پہچانی جاتی ہے تیرے بیمار ہونے کی یہ علامتیں ہیں۔

 

 

 
 
فہرست

شکایت
...............................
>>
پہلی علامت
...............................
>>
محبت کی کسوٹی
...............................
>>
بیماریٔ دل کی شدت و کمی
...............................
>>
دوسری علامت
...............................
>>
دل کی صحت کی علامتیں
...............................
>>
دل کی بیماریوں کا مادہ
...............................
>>
دل کے بیمار کا پرہیز
...............................
>>
دل کے طبیب
...............................
>>
دل کے علاج کی ترغیب
...............................
>>
دل کے بیماریوں کے ادویہ
...............................
>>
دل کی بیماریوں کے اسباب
...............................
>>
دل کے بیماریوں کے لئے اصول علاج
...............................
>>
روحانی طبیب کے لئے اصول علاج
...............................
>>
دل کے بیماروں سے خطاب
...............................
>>
روحانی نسخوں کا شہد
...............................
>>
ذکر کی ماہیت
...............................
>>
مشغول کے لئے طریقۂ ذکر
...............................
>>
دل کے بیمار کے لئے چند کام کی باتیں
...............................
>>
دل کے بیماریوں کا تفصیلی علاج
...............................
>>
مرض عصیاں کے لئے دستوں کی دوا
...............................
>>
غذا
...............................
>>
پرہیز
...............................
>>
علامات صحت
...............................
>>
حُب دنیا!
...............................
>>
امراض کے اقسام
...............................
>>
تشخیص میں غلطی
...............................
>>
اسباب مرض
...............................
>>
علاج مرض
...............................
>>
اس نسخہ کا اور ایک جز
...............................
>>
بیعت اور اس کے متعلق امور
...............................
>>
طریق ذکر
...............................
>>
تصور شیخ اور وساوس
...............................
>>
غایت بیعت و مقصود ذکر
...............................
>>
وظائف اور اشغال
...............................
>>

     

All right reserved 2011 - Ziaislamic.com