***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****
 
f18: تشہد سے متعلق حدیث شریف <Back
سوال

برائے مہربانی مکمل تشھد حدیث شریف کے حوالہ سے روانہ فرمائیں، موجب تشکر ہوگا۔

جواب

تشھد سے متعلق مختلف احادیث شریفہ آئی ہیں جن میں کلمات تشھد میں قدرے فرق ہے،احناف حضرت عبد اللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے مروی تشھد پڑھتے ہیں جو صحیح بخاری و صحیح مسلم میں مذکور ہے: عَنْ شَقِيقِ بْنِ سَلَمَةَ قَالَ قَالَ عَبْدُ اللَّهِ .... فَالْتَفَتَ إِلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ إِنَّ اللَّهَ هُوَ السَّلَامُ فَإِذَا صَلَّى أَحَدُكُمْ فَلْيَقُلْ التَّحِيَّاتُ لِلَّهِ وَالصَّلَوَاتُ وَالطَّيِّبَاتُ السَّلَامُ عَلَيْكَ أَيُّهَا النَّبِيُّ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ السَّلَامُ عَلَيْنَا وَعَلَى عِبَادِ اللَّهِ الصَّالِحِينَ فَإِنَّكُمْ إِذَا قُلْتُمُوهَا أَصَابَتْ كُلَّ عَبْدٍ لِلَّهِ صَالِحٍ فِي السَّمَاءِ وَالْأَرْضِ .أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ- حضرت شقیق بن سلمہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں کہا ، حضرت عبد اللہ ابن مسعود رضی اللہ عنہما نے فرمایا ۔۔۔۔۔۔ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہماری طرف متوجہ ہوئے اور آپ نے ارشاد فرمایا: بیشک اللہ تعالی وہی (سلام) سلامتی دینے والا ہے، جب تم میں کوئی نماز ادا کرے تو چاہئے کہ وہ کہے: التَّحِيَّاتُ لِلَّهِ وَالصَّلَوَاتُ وَالطَّيِّبَاتُ السَّلَامُ عَلَيْكَ أَيُّهَا النَّبِيُّ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ السَّلَامُ عَلَيْنَا وَعَلَى عِبَادِ اللَّهِ الصَّالِحِينَ۔۔۔۔ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ- کیونکہ جب تم ان کلمات کو ادا کروگے تو وہ بطور سلام زمین و آسمان میں رہنے والے تمام نیک بندوں کو پہنچ جائے گا- (صحیح بخاری,كتاب الأذان,باب التشهد في الآخرة،حدیث نمبر:831،/ صحیح مسلم,كتاب الصلاۃ,باب التشهد في الصلاۃ ،حدیث نمبر:402) واللہ اعلم بالصواب ۔ سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com