***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****
 
f324: ایس ایم ایس کے ذریعہ موصول حدیث شریف کی تحقیق <Back
سوال

ایک ایس ایم ایس موصول ہواتھا، اُس کے بارے میں معلوم کرنا ہے کہ صحیح ہے یا نہیں؟ \"ایک صحابی رضی اللہ عنہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا:یا رسول اللہ‌صلی اللہ علیہ وسلم ! ہم نے آپ کودیکھا،آپ سے بات کی اورآپ کے ساتھ کھانا کھایا. کیا ہم سےبھی زیادہ خوش نصیب کوئی ہوگا اِس دُنیا میں؟ آپ‌صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:تم نے مُجھے دیکھا اور سُنا تو ایمان لائے،میری آنے والی اُمت جومُجھےبنا دیکھے، بنا سُنے مُجھ پہ ایمان لائےگی وہ تم سے کہیں زیادہ خوش نصیب ہونگے.\" حضور کیا یہ صحیح حدیث‌ہے؟ اگر ہاں! تو مکمل حوالہ ارشاد فرمائیں، کتاب الفلاں، باب الفلاں اور جلد و صفحہ کے ساتھ، جزاک اللہ.فی امان اللہ

جواب

اس جیسی احادیث شریفہ مختلف الفاظ سے وارد ہیں،امام طبرانی کی معجم کبیرمیں مذکورہے : عَنْ أَبِي أُمَامَةَ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ:\"طُوبَى لِمَنْ رَآنِي، وَآمَنَ بِي، وَطُوبَى سَبْعَ مَرَّاتٍ لِمَنْ آمَنَ بِي، وَلَمْ يَرَنِي\". ترجمہ :سیدناابوامامہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایااس شخص کے لئے خوشخبری ہے جس نے میرے دیدارکا شرف حاصل کیا اور مجھ پرایمان لایااوراس شخص کے لئے سات مرتبہ خوشخبری ہے جو مجھ پرایمان لایا اور مجھے نہ دیکھاہو۔(معجم کبیر۔طبرانی ۔حدیث نمبر:7935، صحیح ابن حبان ،کتاب اخبارہ صلی اللہ علیہ وسلم عن مناقب الصحابة ۔ حدیث نمبر:7355،مسنداحمد، حدیث نمبر:12914) اورالفاظ کے اختلاف کے ساتھ دیگرروایتوں میں تین مرتبہ مژدہ وبشارت کا ذکرہے ،صحیح ابن حبان میں حدیث پاک ہے ، عن أبي سعيد الخدري : عن رسول الله صلى الله عليه و سلم أن رجلا قال له : يارسول الله طوبى لمن راك وآمن بك قال : ( طوبى لمن رآني وآمن بي وطوبى ثم طوبى لمن آمن بي ولم يرني ) ترجمہ:سیدناابوسعیدخدری رضی اللہ عنہ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے روایت کرتے ہیں کہ ایک صاحب نے حضورصلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا:یارسول صلی اللہ علیہ وسلم اس شخص کے لئے خوشخبری ہے جس نے آپ کے دیدار کی سعادت حاصل کی اورآپ پر ایمان لایا؟ حضورصلی اللہ علیہ وسلم نے ارشادفرمایا: اس شخص کے لئے خوشخبری ہے جس نے میرے دیدار کی سعادت حاصل کی اور مجھ پرایمان لایااورخوشخبری پھرخوشخبری ہے اس شخص کے لئے جو مجھ پرایمان لایا اورمیرادیدارنہیں کیا۔(صحیح ابن حبان ،کتاب اخبارہ صلی اللہ علیہ وسلم من مناقب الصحابة ،باب فضل الامة ، حدیث نمبر:723 ،مسنداحمد، حدیث نمبر:11691،مسندابویعلی ، حدیث نمبر:1374) بعض روایتوں میں دومرتبہ خوشخبری کا ذکرہے ،بعض میں تین مرتبہ کا اوربعض میں سات مرتبہ کا ذکرہے ۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com