***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****
 
f356: لڑکی کا ملازمت کرنا کیساہے؟ <Back
سوال

السلام علیکم! آج کل لڑکیاں شادی کے بعد نوکری کرنا چاہتی ہیں‘ میرا رسم ہوچکا ہے اور مجھے پتہ چلا ہے کہ میری منگیتر بھی شادی کے بعد نوکری کرنا چاہتی ہے‘ کیا اسلام میں اس کی اجازت ہے؟ اگر ہے تو اس کی شرائط کیا ہیں؟

جواب

دین اسلام میں خواتین کے لئے پردہ کی بڑی تاکید کی گئی ہے‘ بے پردہ رہنا اور اجنبی و غیر محرم لوگوں کے سامنے بے پردہ نکلنا عورتوں کے لئے حرام ہے‘ عورتوں کا سب سے بہتر و محفوظ مقام ان کا گھر ہے‘ جس میں ان کی عزت و آبرو کی حفاظت و ضمانت ہے اور عورتوں کو قرآن شریف نے گھروں میں رہنے کا حکم دیا‘ جیسا کہ آیت کریمہ سے ظاہر ہے : وَقَرْنَ فِیْ بُیُوتِکُنَّ وَلَا تَبَرَّجْنَ تَبَرُّجَ الْجَاہِلِیَّۃِ الْأُوْلٰی (سورۃ الاحزاب‘ آیت: 32)۔

اگرعورتوں کا کوئی نگہبان و ذمہ دار نہ ہو‘ جو ان کے خورد و نوش کا انتظام کرے یا بیرون گھر کسی دینی‘ تعلیمی یا معاشی ضرورت ہو تو خواتین کے لئے پردہ کے نہایت اہتمام کے ساتھ اور فتنہ و فساد سے دور رہتے ہوئے ملازمت کرنا بھی جائز ہے‘ خصوصاً جہاں نوکری کی جاتی ہے وہاں کے اسٹاف سے اور تمام اجنبی مرد حضرات سے شرعی پردہ کا اہتمام کیا جائے اور بلا ضرورت گفتگو سے بھی مکمل احتیاط کیا جائے ۔ واللہ اعلم بالصواب سید ضیاء الدین عفی عنہ شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدرابوالحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر www.ziaislamic.com حیدرآباد ، دکن ،انڈیا

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com