***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عقائد کا بیان > ایمان باللہ کا بیان

Share |
سرخی : f 1087    خوشنودیٔ الٰہی
مقام : ,
نام :
سوال:    

کوئی ایسا عمل بتائیے جس کے کرنے سے اللہ راضی ہوجائے اور کتنا بھی بڑا گنہگار بندہ ہو اللہ اس کو معاف کردے۔


............................................................................
جواب:    

آپ اسلامی احکام پر کاربند رہیں‘ سنتوں پر عمل کرتے رہیں‘ مستحبات کا لحاظ رکھیں‘ مکروہات سے اجتناب کریں‘ اس کے لئے درج ذیل حدیث پاک کو پیش نظر رکھیں:عن سفیان بن عبداللہ الثقفی قال قلت یا رسول اللہ قل لی فی الاسلام قولا لا اسال عنہ احدا بعدک و فی حدیث ابی اسامۃ غیرک قال قل اٰمنت باللہ ثم استقم۔ ترجمہ: حضرت سفیان بن عبداللہ ثقفی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے‘ انہوں نے فرمایا: میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم: مجھے اسلام کے بارے میں ایسی بات فرمائیے کہ میں اس کے بارے میں آپ کے بعد- اور ایک روایت میں -آپ کے علاوہ کسی سے سوال نہ کروں‘ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: کہو ’’میں اللہ پر ایمان لایا‘‘ اور اس پرثابت قدم رہو ۔ (صحیح مسلم ‘کتاب الایمان‘ باب جامع اوصاف الاسلام‘ حدیث نمبر 55) ایمان پر استقامت کا مطلب واضح ہے کہ حسب تفصیل مذکور ایمان کے تقاضوں پر عمل کیا جائے‘ اس سے اللہ تعالیٰ کی رضا و خوشنودی حاصل ہوتی ہے۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com