***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان > نجاست کے مسائل

Share |
سرخی : f 1096    قالین‘ شطرنجی پاک کرنے کا طریقہ
مقام : بیجاپورکرناٹک،انڈیا,
نام : محمد غوث پاشاہ
سوال:     میرا سوال یہ ہے کہ گھروں میں قالین شطرنجی وغیرہ بچھی ہوئی ہوتی ہے بسا اوقات بچے اس پر پیشاب کردیتے ہیں اور اسے دھونا ممکن نہیں ہوتاتو اسے پاک کرنے کا کیا طریقہ ہے؟ براہ کرم جواب عنایت فرمائیں۔
............................................................................
جواب:     نجاست اگر شطرنجی‘ قالین‘ حصیر وغیرہ جیسی چیزوں پر لگ جائے جس کا نچوڑنا دشوار ہو تو دیکھا جائے گا کہ آیا وہ نجاست دکھائی دینے والی ہے یا دکھائی نہیںدینے والی ہے؟  
(1) اگر نجاست دکھائی دینے والی نہیں ہے اور شطرنجی‘ قالین‘ حصیر وغیرہ میں پوری طرح جذب ہو چکی ہوتو اس کو تین مرتبہ دھولینا ضروری ہے، اس کو دھونے کے ساتھ ساتھ ہر مرتبہ اس طرح خشک کرنا ضروری ہے کہ پانی کا ٹپکنا موقوف ہوجائے اور اگر نجاست پوری طرح جذب نہ ہوئی ہو تو تین مرتبہ دھولینا کافی ہے‘ ہر مرتبہ اس طرح خشک کرنا کہ پانی کا ٹپکنا موقوف ہوجائے ضروری نہیں۔ (2)اگر دکھائی دینے والی نجاست لگ جائے تو اسے دھونے میں تعداد کی شرط نہیں بلکہ عین نجاست کا دور ہونا ضروری ہے جس حد تک دور ہو سکے، خواہ ایک مرتبہ دھونے سے دور ہو یا تین مرتبہ دھونے سے ، اور جو نجاست تین مرتبہ دھونے کے باوجود مکمل زائل نہ ہوتو اس کے دور ہونے تک دھوتا جائے البتہ دھبہ باقی رہ جائے تو کوئی حرج نہیں۔
اور ایک طریقہ یہ ہے کہ ناپاک شطرنجی‘ قالین‘ حصیر وغیرہ کو بہتے ہوئے پانی میں اتنی دیر رکھیں کہ نجاست دھل کر دور ہوجانے کا گمان غالب ہوجائے تو ایسی صورت میں وہ پاک قرار پائے گی۔ جیساکہ فتاوی عالمگیری کتاب الطہارۃ، الفصل الأول فی تطہیر الأنجاسمیں ہے:
  وإزالتہا إن کانت مرئیۃ بإزالۃ عینہا وأثرہا إن کانت شیئا یزول أثرہ ولا یعتبر فیہ العدد .کذا فی المحیط فلو زالت عینہا بمرۃ اکتفی بہا ولو لم تزل بثلاثۃ تغسل إلی أن تزول ، کذا فی السراجیۃ ۔ ۔ ۔ وإن کانت غیر مرئیۃ یغسلہا ثلاث مرات .۔۔۔وما لا ینعصر یطہر بالغسل ثلاث مرات والتجفیف فی کل مرۃ ؛ لأن للتجفیف أثرا فی استخراج النجاسۃ وحد التجفیف أن یخلیہ حتی ینقطع التقاطر ولا یشترط فیہ الیبس ہکذا فی التبیین ہذا إذا تشربت النجاسۃ کثیرا وإن لم تتشرب فیہ أو تشربت قلیلا یطہر بالغسل ثلاثا ہکذا فی محیط السرخسی۔   
واللہ اعلم بالصواب
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔
حیدرآباد دکن۔
All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com