***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عقائد کا بیان > نبوت و رسالت کا بیان

Share |
سرخی : f 1154    ختم نبوت کے منکر کی عبادت کا حکم
مقام : نظام آباد،انڈیا,
نام : محمدحامد
سوال:     اگر کوئی شخص کلمہ شہادت کا اقرار کرتا ہے ونیزارکان اسلام نماز ، روزہ وغیرہ کا پانبد ہے لیکن حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو خاتم النبیین نہیں مانتا ، توکیا اس شخص کی عبادت کا اعتبار رہے گا؟
............................................................................
جواب:     عبادات واعمال کا انحصار ومدار ایمان پر ہے، ایمان کے بغیر اعمال ،عبادت نہیں قرار پاتے ، اور حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو خاتم النبیین ماننا ایمانیات میں داخل ہے، جوشخص اس بنیادی عقیدئہ کو نہ مانے اور اس پرایمان و ایقان نہ رکھے وہ کافرہے اورکافر جو اعمال انجام دیتا ہے وہ سب حبط اور اکارت ہوجاتے ہیں ،بارگاہ خداوندی میں اس کے کسی عمل کا اعتبار نہیں ۔ ومن یکفر بالایمان فقد حبط علمہ وھو فی الاخرۃ من الخسرین ۔ ترجمہ: اور جو شخص ایمانیات کا انکار کربیٹھے اس کے سارے اعمال برباد ہوگئے اور وہ آخرت میں نقصان اٹھانے والوں میں ہوگا۔ (سورۃ المائدۃ ۔5)
واللہ اعلم بالصواب ۔
مفتی سید ضیاء الدین عفی عنہ ،
شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
وبانی ابوالحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر   www.ziaislamic.com
حیدرآباد
All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com