***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > معاملات > وراثت کا بیان

Share |
سرخی : f 116    ترکہ کی تقسیم
مقام : دلسکھ نگر india,
نام : عثمان احمد
سوال:     ایک صاحب کا انتقال ہوچکاہے ،ورثہ میں دو بیوگان ،ماں باپ،تین لڑکیاں اورپانچ لڑکے ہیں ،مرحوم نے جو مال و جائیداد چھوڑا ہے ورثہ کے درمیان اس کو کیسے تقسیم کیا جائے ،شریعت کے مطابق اس کی تقسیم کس طرح ہوگی؟

............................................................................
جواب:     شریعت مطہرہ میں میت کے ترکہ سے ترتیب وار چار حقوق متعلق ہوتے ہیں،(1)تجہیز وتکفین کا نظم(2)قرضہ جات کی منہائی ،بیوی کا مہر ادانہ کیا ہو تو اسکی ادائی (3)کسی غیر وارث کے حق میں کوئی وصیت کی ہو تو باقی مال کے ایک تہائی سے وصیت کی اجرائی (4)باقی ماندہ متروکہ کی ورثہ کے درمیان کتاب وسنت کے مطابق تقسیم۔
جیسا کہ السراجی فی علم الفرائض ص3!4میں ہے: تتعلق بترکة الميت حقوق اربعة مرتبة الاول يبدأ بتکفينه وتجهيزہ من غير تبذير ولا تقتيرثم تقضی ديونه من جميع مابقی من ماله ثم تنفذ وصاياہ من ثلث مابقی بعد الدين ثم يقسم الباقی بين ورثتي بالکتاب والسنة واجماع الامة۔
دریافت کردہ صورت میں حکمِ شریعت یہ ہے کہ سب سے پہلے مرحوم کے ترکہ سے اخراجاتِ تجہیز وتکفین وضع کئے جاکر جس نے خرچ کئے ہیں اس کو دئیے جائیں، بعد ازاں مرحوم کی بیواؤںکا زرِ مہر واجب الادا ہو تو اس کو ادا کیا جائے ونیز مرحوم کے ذمہ اگر قرضہ جات تھے تو انہیں اداکردیاجائے اگر انہوں نے کسی غیر وارث کے لئے کوئی وصیت کی تھی تو ما بقی مالِ متروکہ کے ایک تہائی سے وصیت پوری کی جائے ،اس کے بعد باقی متروکۂ مرحوم کے جملہ اڑتالیس (48)حصے کئے جاکر ان کی دو بیویوں میں ہر ایک کو چھ (6) چھ (6(، تین لڑکیوں میں سے ہر ایک کو دو (2) دو (2) ،پانچ لڑکوں میں ہر ایک کو چار(4) چار(4) اورمرحوم کی والدہ کو آٹھ(8) حصے اور والدکو آٹھ (8) حصے دئے جائیں۔

ہکذاصورۃ المسئلۃ

24*2=48
میت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب    ام      بنت      بنت        بنت         ابن         ابن         ابن        ابن          ابن          زوجہ         زوجہ
۸/۴   ۸/ ۴  ۲ /۱      ۲/۱        ۲/۱         ۴/۲        ۴/۲        ۴/۲       ۴/۲         ۴/۲        ۳/۵.۱        ۳/۵.۱
واللہ اعلم بالصواب –
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
نائب شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔
حیدرآباد دکن۔
All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com