***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > نماز کا بیان > سجدۂ سہو کے مسائل

Share |
سرخی : f 1169    نمازمیں سورہ فاتحہ کی جگہ تشہد پڑھ لے تو کیاحکم ہے
مقام : انڈیا,
نام : فرید
سوال:    

میں پنجوقتہ نماز یں پابندی سے پڑھنے کو شش کرتا ہوں کبھی کبھی نماز میں غلطی آجاتی ہے اس لئے جب بھی فرصت ملے خاص طور پر نماز کے مسائل معلوم کرنے کی فکر کرتا ہوں ، ایک دودن پہلے میں دوسری رکعت میں سورہٗ فاتحہ پڑھنے کے بجائے غلطی سے التحیات پڑھنا شروع کیا جب التحیات مکمل پڑھ چکا تھا خیال آتے ہی بسم اللہ پڑ ھ کر سورہٗفاتحہ وضم سورہ پڑھا مجھے مسئلہ معلوم نہیں پھر بھی سجدہٗسہو تو کر لیا برائے مہربانی یہ بیان فرمائیں کہ کوئی شخص سورہٗ فاتحہ کی جگہ تشہد پڑھ لے تو کیا کرے ؟


............................................................................
جواب:    

آپ کا یہ جذبہ لائق ستائش ہے کہ آپ کو مسائل سے واقف ہونے کی فکر لاحق رہتی ہے اور فرصت کے اوقات میں آپ مسائل معلوم کرنے کے لئے کوشاں رہتے ہیں اب رہا آپ کا سوال کہ کوئی شخص سورہ فاتحہ کی جگہ تشہد پڑھ لے تو کیا کرے؟ فقہائے کرام نے اس سلسلہ میں وضاحت فرمائی ہے کہ حالت قیام میں سورئہ فاتحہ سے پہلے غلطی سے تشہد پڑھ لے توسجدئہ سہو واجب نہیں البتہ اگر سورئہ فاتحہ کے بعد تشہد پڑھے تو سجدئہ سہو کرنا ضروری ہے جیسا کہ البحر الرائق ج 2باب سجود السھوص 172 میں ہے ومنھا لو تشہد فی قیامہ بعد الفاتحۃ لزمہ السجود وقبلہا لا علی الاصح ۔ واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com