***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان

Share |
سرخی : f 1349    خون لگے ہوئے گوشت کا حکم
مقام : جالنہ، انڈیا,
نام : محمد متین الدین
سوال:    

میں نے سنا ہے کہ خون ناپاک ہوتا ہے ، اس کے متعلق میرا ایک سوال ہے ، ذبح کرنے کے بعد جانور سے خون نکل جاتا ہے‘ پھر بھی گوشت کاٹتے وقت خون کے قطرات نکلتے ہیں اور یہ خون گوشت کو لگا ہوتا ہے ، کیا اس گوشت کودھونا ضروری ہے؟ جس طرح کپڑے کونجاست لگنے کی وجہ سے دھولیتے ہیں؟


............................................................................
جواب:    

جانور ذبح کرتے وقت جو خون بہہ کر نکلتا ہے وہ ناپاک ہے، اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے: قل لا اجد فی مااوحی الی محرما علی طاعم یطعمہ الا ان یکون میتۃ اودما مسفوحا اولحم خنزیر۔ ترجمہ : آپ فرمادیجئے میری طرف جو وحی کی گئی ہے اس میں کھانے والے پر حرام چیز نہیں پاتاہوں مگریہ کہ وہ مردار ہو یا بہتا خون ہو یا خنزیر کا گوشت ہو۔ (سورۃ الانعام۔145) اس آیت کریمہ میں بہتے ہوئے خون کو ناپاک قرار دیا گیا ہے،اور جو خون ذبح کئے گئے جانور کی رگوں میں باقی رہ جائے چونکہ وہ بہتا ہوا نہیں ہے، اس لئے فقہاء کرام نے اسے ناپاک نہیں کہا ہے۔              لہذا اگر گوشت میں خون باقی رہ جائے تو اس کی وجہ سے گوشت نجس وناپاک نہیں قرار پاتا، بہرحال اُسے دھولینا چاہئے۔ جیسا کہ حاشیۃ الشلبی علی تبيین الحقائق، کتاب الطہارۃ، باب الانجاس ص199میں ہے: والمراد بالدم غیر الباقی فی العروق وفی حکمہ اللحم المہزول إذا قطع فالدم الذی فیہ لیس نجسا۔ واللہ اعلم بالصواب ۔ سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com