***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > معاملات > حلال و حرام کا بیان

Share |
سرخی : f 1502    خاندانی منصوبہ بندی کےلئے مانع حمل دوائیں استعمال کرنا
مقام : انڈیا,
نام : سید خواجہ عظیم الدین
سوال:    

میں میرے چاچا کے گھر میں اپنی بیوی اور دو بچوں کے ساتھ کرائے سے رہتا ہوں اور اتنا کماتا ہوں جو فی الوقت میرے لئے کافی ہے؟ کیا میری بیوی خاندانی منصوبہ بندی کے لئے مانع حمل دوائیں لے سکتی ہے یا پھر کوئی اور طریقہ استعمال کرنا ہوگا؟


............................................................................
جواب:    

وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ و برکاتہ! ماں کی صحت کی بہتری کے لئے یا شیر خوار کے دودھ کی خاطر یا کسی اور وجہ سے اگلے بچہ کے حمل کو محدود مدت تک کے لئے روکنے کی غرض سے مانع حمل دوائیں استعمال کرنا شرعاً جائز ہے‘ لیکن کوئی ایسا طریقہ اختیار کرنا جائز نہیں جس کی وجہ سے شوہر میں قوتِ تولید باقی نہ رہے یا بیوی کے استقرار حمل کی صلاحیت ختم ہوجائے۔ یہ سخت گناہ اور حرام ہے۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com