***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > زکوٰۃ کا بیان > زکوٰۃ واجب ہونے کی صورتیں

Share |
سرخی : f 235    قرض کی زکوٰۃ کا حکم
مقام : جدہ‘ سعودی عرب,
نام : محمد عارف محی الدین
سوال:    

قرض حسنہ دی ہوئی رقم جو ہمارے پاس نہیں ہے‘کیا اس رقم کی زکوٰۃ دینی ہوگی؟


............................................................................
جواب:    

قرض دی ہوئی رقم کی زکوٰۃ‘قرض دینے والے شخص پر واجب ہے جبکہ وہ صاحب نصاب ہو‘ اگر طویل مدت ہو تو جتنے سال کا عرصہ ہو اس دوران ہر سال کی زکوٰۃ واجب ہے‘ البتہ رقم وصول ہونے کے بعد زکوٰۃ دینے کی گنجائش ہے‘ تاخیر کی وجہ گنہگار نہ ہوگا۔ اگر رقم ملنے کی امید نہ ہو جیسے قرض دار انکار کرے اور ثبوت موجود نہ ہو یا قرض دار مفلس ہوجائے تو اس قرض کی زکوٰۃ واجب نہیں۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com