***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > معاملات > حلال و حرام کا بیان

Share |
سرخی : f 734    مرد آدمی کا چاندی کی دوانگوٹھیاں پہننا کیسا ہے؟
مقام : سعودیہ عربیہ,
نام : سید سلمان قادری
سوال:    

میرا سوال یہ ہے کہ کیا ہم دو انگلیوں میں دو انگوٹھیاں پہن سکتے ہیں ؟ایک درمیانی انگلی میں اور ایک درمیانی انگلی کے بازو والی انگلی میں-


............................................................................
جواب:    

مرد کے لئے ایک انگوٹھی وہ بھی ایک مثقال سے زائد چاندی پہننا درست نہیں ہے،جبکہ خواتین چاندی اور سونے کی جتنے چاھیں انگوٹھیاں پہن سکتی ہے- جامع ترمذی ، سنن ابو داؤد ، سنن نسائی اور زجاجۃ المصابیح میں حدیث شریف ہے ؛ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک صحابی سے ارشاد فرمایا: قَالَ اتَّخِذْهُ مِنْ وَرِقٍ وَلَا تُتِمَّهُ مِثْقَالًا- ترجمہ: تم چاندی کی انگوٹھی بھی مکمل ایک مثقال کی مت بناؤ- (جامع ترمذی ، ابواب اللباس عن رسول الله صلى الله عليه وسلم ،باب ما جاء في الخاتم الحديد ، حدیث نمبر:1707-سنن ابو داؤد ، كتاب اللباس، باب ما جاء في خاتم الحديد، حدیث نمبر:3687- سنن نسائی، كتاب الزينة،باب مقدار ما يجعل في الخاتم من الفضة، حدیث نمبر:5100- زجاجۃ المصابیح،ج3،ص397) ایک مثقال 3.03775 گرام ہوتا ہے- واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ حیدرآباد دکن۔ www.ziaislamic.com

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com