***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان > پانی کے مسائل

Share |
سرخی : f 887    ناپاک قطرات ایک ہزار لیٹر کی ٹانکی میں گرجائیں تو۔ ۔ ۔ ؟
مقام : کونڈاپور، حیدرآباد،انڈیا,
نام : راشد خان
سوال:    

ہمارے پاس ایک بالٹی میں کتا منہ ڈال دیا جو پانی سے بھری ہوئی تھی ، ا س پانی کو ہم نے پھینک دیا ،کچھ قطرے پانی بالٹی میں موجود تھا ابھی ہم لوگ بالٹی کو دھونے ہی والے تھے کہ بچوں نے اس بالٹی کو واٹرٹینک(Water tank) میں ڈبودیا ، جو ایک ہزار لیٹر کی ہے ،بالٹی ٹانکی میں پوری طرح ڈوب چکی تھی ، ایسے وقت پانی کا حکم کیا رہے گا ؟ کیا ا س پانی کو وضو کے لئے یا کپڑے دھونے کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے ؟ ہم نے فی الحال ٹانکی سے پانی بہاکر اسے خالی کردیا ہے ، لیکن ہمارے گھر میں چھوٹے بچے بہت ہیں ، اس طرح کی حرکتیں ہوتی رہتی ہیں ،ہم بچوں کو سمجھاتے بھی ہیں ، اس کے باوجود ایسی کوئی حرکت بچوں سے ہوجائے تو ہمیں کیا کرنا چاہئے ؟ کیا ایسے پانی کو پاک کرکے استعمال کیا جاسکتا ہے ؟


............................................................................
جواب:    

کتا حرام جانور ہے اور اس کا لعاب ناپاک ہوتا ہے ، اگرکتا کسی برتن میں منہ ڈال دے توبرتن کا پانی ناپاک ہوجاتا ہے ، اور نجس پانی، پاک پانی میں مل جائے جو بہتا ہوا نہ ہو اور دہ دردہ سے کم ہو تو پاک پانی بھی نجس ہوجاتا ہے ۔ جب کتا منہ ڈالنے کی وجہ سے برتن کا پانی ناپاک ہوچکا تھا پھروہ برتن ا سکے ناپاک قطرے کے ساتھ ایک ہزار لیٹر والی ٹانکی میں ڈالا گیا جیسا کہ آپ نے سوال میں ذکر کیا ہے تو چونکہ اس ٹانکی کا پانی دہ دردہ نہیں ہے لہذا یہ پانی بھی ناپاک ہوچکا، اس سے وضوکرنا یا کپڑے دھونا شرعا جائز نہیں اور اس پانی کو پاک کرنے کا کوئی طریقہ نہیں ہے ، ایسی صورت میں ٹانکی خالی کرنے کے بعد اسے تین مرتبہ پاک پانی سے دھویا جائے اور ہر مرتبہ ٹانکی سے پانی نکالا جائے ،تین مرتبہ دھونے سے ٹانکی پاک ہوجائے گی ،اب اس میں پاک پانی جمع کیا جاسکتا ہے ، بالٹی کو بھی اسی طرح تین مرتبہ دھوکر پاک کرلینا چاہئے ۔ ہدایہ کتاب الطہارات، فضل فی الاساروغیرہا میں ہے : وسؤرالکلب نجس ، نورالایضاح ،کتاب الطہارۃ میں ہے : والرابع ماء نجس وہوالذی حلت فیہ نجاسۃ وکان راکدا قلیلا والقلیل مادون عشرفی عشر فینجس وان لم یظہر اثر ھا فیہ ۔ ۔ ۔ ۔ واللہ اعلم بالصواب ۔ سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com