***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان > نجاست کے مسائل

Share |
سرخی : f 920    حصیر کو پاک کرنے کا طریقہ
مقام : نظام آباد،انڈیا,
نام : سیداحمد
سوال:    

میرے گھر میں ایک چھوٹی بچی ہے ، ابھی رینگنے کی عمر میں ہے ، وہ گھر میں کبھی حصیر پر پیشاب کردیتی ہے ، تو کیا حصیر کو پاک کرنے کے لئے اس پر صرف پانی سے پوچا مارنا ہی کافی ہے یا حصیر کو دھونا ضروری ہے ، کیا کرناچاہئے ؟ ارشاد فرمائیں ، جزاک اللہ


............................................................................
جواب:    

حصیر پر بچی پیشاب کرنے کی صورت میں حصیر کواچھی طرح دھولیاجائے ،صرف پانی کا چھڑکاؤ کافی نہیں ہے ‘کیونکہ فقہاء کرام نے صراحت کی ہے کہ حصیر پر نجاست لگ جائے تو دیکھا جائے گا کہ نجاست خشک ہے یا تر ہے ، اگر نجاست خشک ہوتو اُسے رگڑکر دور کرنے سے پاک ہوجاتی ہے ، اگر نجاست تر ہو اور حصیربانس یا اس جیسی چیز سے بنی ہوئی ہو تو اچھی طرح دھونے سے پاک ہوتی ہے ۔ جیساکہ فتاوی عالمگیری ، کتاب الطھارۃ میں ہے :حصیر أصابتہ نجاسۃ فإن کانت النجاسۃ یابسۃ لا بد من الدلک حتی تلین وإن کانت رطبۃ إن کان الحصیر من قصب أو ما أشبہہ یطہر بالغسل ولا یحتاج فیہ إلی شیء آخر .(فتاوی عالمگیری ، کتاب الطھارۃ ، الفصل الاول فی تطھیر الانجاس)۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com