***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > نماز کا بیان > غسل ،تجہیز وتکفین اور تدف

Share |
سرخی : f 924    کسی کے انتقال کی اطلاع دینے کاشرعی حکم
مقام : کریم نگر، انڈیا,
نام : محمد خلیل
سوال:     کسی شخص کا انتقال ہوجائے تو لوگوں کو انتقال کی خبردینا چاہئے یا نہیں ؟ میں نے سنا تھا کہ انتقال کی خبر کو پھیلانا نہیں چاہئے اور جلدی دفن کرنے کی کوشش کرنی چاہئے یہ بات کہاں تک درست ہے؟
............................................................................
جواب:     کسی شخص کی موت واقع ہوجائے تو میت کی تجہیز وتکفین میں جلدی کرنی چاہئے ، تدفین میں جلدی کرنے کا مطلب یہ ہے کہ میت کو گھر میں روکے رکھنا نہیں چاہئے جیسا کہ مراقی الفلاح مع حاشیۃ الطحطاوی کتاب الصلوۃ باب احکام الجنائز ص 565۔566 میں ہے :(و) اذاتیقن موتہ (یعجل بتجہیزہ ) اکرامالہ لمافی الحدیث وعجلوا بہ فانہ لاینبغی لجیفۃ مسلم ان تحبس بین ظہرانی اہلہ ۔
ترجمہ: جب کسی کے انتقال کا یقین ہوجائے تو میت کے احترام کی غرض سے تجہیز وتکفین میں جلدی کی جائے کیونکہ سرکاردوعالم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشادمبارک ہے کہ میت کی تدفین میں جلدی کروکیونکہ کسی مسلمان کے جسد خاکی کیلئے یہ مناسب نہیں کہ گھروالوں کے درمیان اس کوروکے رکھاجائے ۔
تدفین میں جلدی کرنے کا یہ مطلب نہیں کہ لوگو ں کو انتقال کی اطلاع نہ دی جائے ،اعزہ واقرباء اور دیگر لوگوں کو انتقال کی اطلاع دینا مستحب ہے کیونکہ جتنے زیادہ لوگوں کواطلاع دی جائیگی نماز جنازہ میں اتنی کثیر تعداد میں لوگ شریک ہوسکیں گے، حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے بھی انتقال شدگان کی خبر دینا ثابت ہے۔
جیسا کہ مراقی الفلاح مع حاشیۃ الطحطاوی کتاب الصلوۃ باب احکام الجنائزص55میں ہے:( ولا بأس بإعلام الناس بموتہ ) بل یستحب لتکثیر المصلین علیہ لما روی الشیخان أن صلی اللہ علیہ و سلم نعی لأصحابہ النجاشی فی الیوم الذی مات فیہ وأنہ نعی جعفر بن أبی طالب وزید بن حارثۃ وعبد اللہ بن رواحۃ .
ترجمہ:لوگوں کو انتقال کی خبردینے میں کوئی حرج نہیں بلکہ نماز جنازہ پڑھنے والوں کی تعداد بڑھانے کے لئے انتقال کی خبردینا مستحب ہے کیونکہ صحیح بخاری ومسلم کی روایت کے مطابق حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو نجاشی بادشاہ کے وصال کی اطلاع دی ونیز حضرت جعفربن ابوطالب ، حضرت زیدبن حارثہ اور حضرت عبداللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہم کے شہادت کی خبردی ۔
واللہ اعلم بالصواب –
سیدضیاءالدین عفی عنہ ،
شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ
بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com
حیدرآباد دکن۔
All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com