***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان > حیض ونفاس کے مسائل

Share |
سرخی : f 942    ماہواری ختم ہونے کے بعد وظیفۂ زوجیت کا حکم
مقام : صنعت نگر,India,
نام : عبد الحنان
سوال:    

عورت کے مخصوص ایام میں ہمبستری نہیں کرنی چاہئیے، لیکن جب عورت کے ایام ختم ہوجائیں تو کیا غسل کرنے سے پہلے صحبت کرنا جائز ہے ؟ اس مسئلہ میں شریعت کا قانون کیاہے ؟


............................................................................
جواب:    

عورت کے ایام میں ہمبستری کرنا ممنوع وحرام ہے اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: فاعتزلوا النساء فی المحیض ولاتقربوھن حتیٰ یطھرن۔ ترجمہ : تو تم عورتوں سے علحٰدگی اختیار کرو اور ان کے قریب مت ہو یہاں تک کہ وہ پاک ہوجائیں ۔ (سورۃ البقرۃ۔222) عورت کے ایام ختم ہونے کے بعد ہمبستری سے متعلق یہ تفصیل ہے کہ اگر دس دن گذرچکے ہوں تو غسل سے پہلے عورت سے ہم آغوش ہونا شرعاًجائز ہے خواہ اس کی عادت مقررہویا نہ ہو ،تاہم غسل سے پہلے اس سے اجتناب کرنا بہتر ومستحب ہے اور اگر دم حیض دس دن سے کم مدت میں منقطع ہوجائے تو ہمبستری جائزنہیں یہاں تک کہ عورت غسل کرلے یا نماز کا آخری وقت گذرجائے کم ازکم اتنا وقت ہوکہ غسل کرکے نماز کا آغاز کرسکے ۔ فتاویٰ عالمگیری ج 1ص39 میں ہے: اذا مضی اکثرمدۃ الحیض وہوالعشرۃ یحل وطؤہا قبل الغسل مبتداۃ کانت او معتادۃ ویستحب لہ ان لایطا ھا حتی تغتسل ھکذا فی المحیط واذا انقطع دم الحیض لاقل من عشرۃ ایام لم یجز وطؤھا حتیٰ تغتسل او یمضی علیھا اخروقت الصلوۃ الذی یسع الاغتسال والتحریمۃ۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com