***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > عبادات > طہارت کا بیان > متفرق مسائل

Share |
سرخی : f 989    کیاچاند کی روشنی سورج سے حاصل کردہ ہے؟
مقام : انڈیا,
نام : فہیم علی
سوال:    

السلام علیکم ! چاند کی روشنی اپنی ہے یا نہیں؟ قرآن مجید کی روشنی میں جواب ارشاد فرمائیں، جزاک اللہ۔


............................................................................
جواب:    

جواب: اللہ تعالی کا ارشاد ہے: ہُوَ الَّذِیْ جَعَلَ الشَّمْسَ ضِیَآءً وَّ الْقَمَرَ نُوْرًا۔ ترجمہ: وہی ہے جس نے سورج کو تابناک اور چاند کو روشن بنایا۔ (سورۂ یونس۔5) امام رازی رحمۃ اللہ علیہ نے تفسیر کبیر میں اور علامہ اسمعیل حقی رحمۃ اللہ علیہ نے تفسیر روح البیان میں لکھا ہے کہ سورج انوار کا سر چشمہ ہے اور چاند سورج سے روشنی حاصل کرتا ہے، اسی وجہ سے اللہ تعالیٰ نے سورج کے لئے ’’ضیاء‘‘ ذکر فرمایا جو ذاتی روشنی کے لئے استعمال ہوتا ہے اور چاند کے لئے ’’نور‘‘ ذکر فرمایا جو دوسرے سے حاصل کردہ روشنی ہوتی ہے۔ تفسیر کبیر میں ہے: المراد من ھذا التلو ھو ان القمر یاخذ الضوء من الشمس- ترجمہ: چاند کا سورج کے پیچھے رہنے سے مراد یہ ہے کہ چاند سورج سے روشنی حاصل کرتا ہے- (تفسیر کبیر، سورۃ الشمس۔2) نیز تفسیرروح البیان میں مرقوم ہے: الا تری ان نور القمر مستفاد من الشمس و نور الشمس بحالہ- ترجمہ: کیا تم نہیں دیکھتے کہ چاند کی روشنی سورج سے حاصل کردہ اور ماخوذ ہوتی ہے اور سورج کی روشنی اس کی اپنی ہوتی ہے۔(تفسیرروح البیان ،سورۃ الاحزاب ۔46) واللہ اعلم بالصواب – سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com