***** دیگر فتاوی مطالعہ کرنے کے لئے داہنی جانب والی فہرست پر کلک کریں *****



مضامین کی فہرست

فتاویٰ > اخلاق کا بیان > آداب

Share |
سرخی : f 998    غیر مسلم کے برتن استعمال کرنے کا شرعی حکم
مقام : کیرلا,
نام : بدیع الدین
سوال:    

مکرم ومحترم مولانا صاحب! میں کیرلا میں کام کرتا ہوں،یہاں سب غیر مسلم ہیں، ہماری کمپنی روزانہ سب کے لئے چائے کاانتظام کرتی ہے، میرا سوال یہ ہے کہ کیا میں چائے پی سکتا ہوں یا نہیں؟یقیناً ہر وقت چائےڈالنے سے پہلے پیالیاں صاف ہوتی ہیں۔ مہربانی فرماکر اسلامی قانون کے مطابق رہنمائی فرمائیں۔


............................................................................
جواب:    

غیر مسلموں کے پاس حلال و حرام کا اعتبار نہیں ہوتا،وہ خنزیر و شراب سے گریز نہیں کرتے اس لئے حضرت نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے غیر مسلموں کے برتن استعمال کر نے سے پہلے دھونے کا حکم فرمایا ہے جیسا کہ جامع ترمذی شریف میں حدیث پاک ہے:عَنْ أَبِي ثَعْلَبَةَ الْخُشَنِيِّ قَالَ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ قُدُورِ الْمَجُوسِ فَقَالَ أَنْقُوهَا غَسْلًا وَاطْبُخُوا فِيهَا- ترجمہ:سیدنا ابو ثعلبہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے فرمایا،حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے مجوسیوں کی ہانڈیوں سے متعلق دریافت کیا گیا تو آپ نے ارشاد فرمایا:ان کو دھوکر صاف کرو اور اس میں پکاؤ۔ (جامع ترمذی,ابواب السير عن رسول الله صلى الله عليه وسلم, باب ما جاء في الانتفاع بآنية المشركين,حدیث نمبر:1482 ) آپ کی کمپنی میں غیر مسلم جن پیالیوں میں چائے دیتے ہیں اگر اس میں خنزیر، شراب وغیرہ حرام غذائیں استعمال نہیں کی گئ ہیں تو انہیں ویسے ہی استعمال کیا جاسکتا ہے ، لہذا ان پیالیوں میں چائے پینے میں کوئی مضائقہ نہیں، البتہ ان میں شراب نوشی وغیرہ ہوتی ہو اور متبادل برتن میسر نہ ہو تو انہیں اچھی طرح دھوکر استعمال کیا جاسکتا ہے ۔ واللہ اعلم بالصواب سیدضیاءالدین عفی عنہ ، شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ ، بانی وصدر ابو الحسنات اسلامک ریسرچ سنٹر ۔ www.ziaislamic.com حیدرآباد دکن۔

All Right Reserved 2009 - ziaislamic.com