Hindi English
 
 
 

Share |
: مضمون
عینِ عبادت نماز میں حکمِ صلوۃ وسلام
نماز جوکہ عین عبادت ہے، اس کے ہرقعدہ میں تشہدپڑھنا واجب ہے ، جس میں اہل اسلام نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  کی خدمت میں سلام پیش کرتے ہیں ، اس موقع پر شبہ پیدا کیا جاتا ہے کہ آیاحضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف متوجہ ہوکر سلام کرنا چائیے یا نہیں ؟ کیا نماز میں بارگاہ نبوی کی طرف توجہ کرنے سے عبادت میں شرک ہوگا؟         چنانچہ حضرت شیخ الاسلام نے صلوۃ وسلام کے جواز اور آداب پر کتاب وسنت کے دلائل سے سیر حاصل بحث فرمانے کے بعداس شبہ کو دورکرتے ہوئے تحریر فرمایا ہے:
"ہر مسلمان کو چاہئے کہ نماز میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کیطرف متوجہ ہو کرسلام عرض کرے اور شک نہ کرے کہ اس میں"شرک فی العبادۃ "ہوگا، کیونکہ جب شارع کی طرف سے اسکا امر ہوگیا تو اب جتنے خیالات اسکے خلاف میں ہو،وہ سب بے ہودہ اور فاسدسمجھے جائیں گے اور اس میں تعلل ایسا ہوگا جیسے ابلیس نے آدم علیہ السلام کے سجدہ میں تعلل کیا تھا۔

اب یہ بات معلوم کرنا چاہئے کہ جب اس سلام کا یہ رتبہ ہو کہ ایک حصہ عبادت محضہ یعنے نماز کا اسکے لئے خاص کیا گیا تو دوسرے اوقات میں ہم لوگوں کو کسقدر اہتمام و ادب چاہئے ہر چند عوام الناس اس قسم کے امور سے مرفوع القلم ہیں ،کیونکہ انکو تو اسی قدر کافی ہے کہ جتنا شارع نے ضروری بتایا اتنا کردیا، مگر اہل عقل وتمیز کو چاہئے کہ ایسے امور میں غور وفکر کریں اور ادب سیکھیں! العاقل تکفیہ الاشارۃ-

الغرض جب کسی وقت خاص میں سلام عرض کرے تو چاہئے کہ کمال ادب کے ساتھ کھڑا ہو اور دست بستہ ہو کر السلام عليک يا سيدنا رسول الله السلام عليک يا سيدنا سيد الاولين والاخرين وغیرہ صیغے جن میں حضرت کی عظمت معلوم ہو، عرض کرے!۔ اب یہاں شاید کوئی شخص یہ اعتراض کرے کہ قیام میں تشبیہ بالعبادة ہے اور وہ جائز نہیں -توجواب اسکا یہ ہے کہ جب عین عبادت میں یہ سلام جائز ہوا تو شبیہ بالعبادة میں کیوں نہ ہو۔ اگر کہا جائے کہ قوموا للہ قانتین سے معلوم ہوتا ہے کہ قیام خاص اللہ کے واسطے چاہئے -تو ہم کہینگے کہ بیشک نماز کا قیام خاص اللہ تعالیٰ کے واسطے ہے اور اگر مطلق قیام کی اس میں تخصیص ہوتی تو لفظ ’’للّٰہ‘‘کی ضرورت نہ تھی ۔خلاصہ یہ کہ اس آیت شریفہ سے نماز کا قیام فرض ہوا نہ یہ کہ انحصار قیام کا اسمیں ثابت ہو،ا گر یہی بات ہوتی تو کوئی قیام درست ہی نہ ہوتا۔ حالانکہ جمہور محدثین وفقہا کے نزدیک علاوہ اور مقاموں کے کسی کے اکرام کے واسطے کھڑا رہنا بھی درست ہے۔ (انوار احمدی ص۱۷۵‘۱۷۶)۔


submit

  SI: 57   
حضور صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے درود وسلام سنتے ہیں  

  SI: 65   
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھنے والا شقاوت سے نکل جاتاہے  

  SI: 41   
اذان کی برکت  

  SI: 47   
آشوب چشم کا فوراً دفع ہونا  

  SI: 68   
قرآن و حدیث سے مسائل کا استنباط کرنا ہرکسی کا کام نہیں  

  SI: 56   
تمام انبیاء و ملائک پر خصوصیت و عظمت آشکار  

  SI: 67   
سرکاردوعالم کی توجہ وعنایت آن واحد میں سب کی طرف  

  SI: 13   
میلاد النبی صلی اللہ علیہ واٰلہ وسلم کی شرعی حیثیت ۔ قسط اول  

  SI: 60   
درود پڑھنے والے پر اللہ کی رحمتیں  

  SI: 64   
عینِ عبادت نماز میں حکمِ صلوۃ وسلام  

Copyright 2008 - Ziaislamic.com All Rights reserved